کرناٹک:گھر کے اندر سے ایک ہی خاندان کے پانچ افراد کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں

بیدر۔27/نومبر۔کرناٹک کے ٹمکور سے دل دہلا دینے والی خبر سامنے آئی ہے۔ یہاں گھر کے اندر سے ایک ہی خاندان کے پانچ افراد کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔ میاں بیوی کی لاشیں لٹکی ہوئی پائی گئیں۔ تو وہیں اس کے تین بچے بستر پر مردہ پائے گئے۔ مرنے سے پہلے خاندان کے سربراہ نے ویڈیو بھی بنائی تھی۔ جس میں انہوں نے بتایا کہ وہ مالی بحران کا شکار ہیں۔ اس نے ایک شخص کا نام بھی لیا۔ انہوں نے کہا کہ ایک شخص مجھے اور میری فیملی کو ہراساں کر رہا ہے۔معلومات کے مطابق یہ واقعہ اتوار کی رات 7.30 بجے پیش آیا۔ مرنے والوں کی شناخت غریب صاب (33)، اس کی بیوی سمیہ (30)، بچوں ہاجرہ (14)، محمد سبحان (10) اور محمد منیر (8) کے طور پر ہوئی ہے۔ یہ واقعہ اس وقت سامنے آیا جب غرنیب صاب نے سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو پوسٹ کی۔ویڈیو میں غریب نے بتایا کہ وہ ان دنوں مالی بحران سے نبرد آزما ہیں۔ اس کی کباب کی دکان ہے جس سے گھریلو اخراجات پورے کرنے میں مدد ملتی ہے۔ لیکن یہ بھی خسارے میں چل رہا ہے۔ اس کے ساتھ انہوں نے کہا کہ قلندر نامی شخص انہیں اور ان کے اہل خانہ کو ہراساں کرتا ہے۔ وہ ہر روز انہیں گالی دیتا ہے اور دھمکیاں بھی دیتا ہے۔ وہ اسی چیز سے پریشان ہیں اور جینا نہیں چاہتے۔ اس شخص نے ریاستی وزیر داخلہ ڈاکٹر جی پرمیشور سے انصاف کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ملزم قلندر کے خلاف کارروائی کی جائے۔جب کچھ لوگوں نے غریب کی ویڈیو دیکھی تو انہوں نے پولیس کو اطلاع دی۔ پھر پتہ چلا کہ گھر میں پورا خاندان مردہ پڑا ہے۔ غریب اور اس کی بیوی کی لاشیں لٹک رہی تھیں۔ جبکہ بچوں کی لاشیں بستر پر پڑی تھیں۔ ابتدائی تفتیش میں پولیس کا خیال تھا کہ غرنیب نے پہلے بچوں کو زہر دیا اور پھر جوڑے نے خودکشی کرلی۔ لیکن ابھی تک اس کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔ لاشوں کو پوسٹ مارٹم کے لیے بھیج کر معاملے کی جانچ کی جا رہی ہے۔ دوسری جانب اس واقعہ کے بعد علاقے میں سنسنی پھیل گئی ہے۔ لوگ یقین نہیں کر سکتے کہ خاندان ایسا قدم اٹھائے گا۔

Latest Indian news

Popular Stories

error: Content is protected !!