اسرائیلی فوجی کی طرف سے فلسطینی موسیقاروں کے گٹار کی مبینہ چوری نے تنازع کھڑا کر دیا

فلسطینی موسیقار حمادہ نے ایک اسرائیلی فوجی پر ان کے گھر سے اپنا پیارا گٹار چوری کرنے کا الزام لگایا ہے جو غزہ میں حالیہ تنازع کے دوران تباہ ہو گیا تھا۔

گٹار حمدا کے مرحوم والد کی طرف سے ایک جذباتی تحفہ، موسیقار کے لیے بہت زیادہ جذباتی اہمیت رکھتا ہے۔

شمالی غزہ کے رہائشی حماد کو علاقے پر اسرائیلی حملے کے دوران اپنا گھر چھوڑنے پر مجبور کیا گیا۔

اس کے بعد اسے سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک ویڈیو کے ذریعے پتہ چلا کہ ایک اسرائیلی فوجی کو اس کے اپنے جیسا گٹار بجاتے ہوئے دیکھا گیا ہے۔

چوری شدہ آلہ وہی تھا جسے حمدا نے متعدد پرفارمنس میں استعمال کیا تھا، اور یہ اس کے ورثے سے اس کے تعلق کی علامت بن گیا تھا۔

اپنی دریافت کے چند دن بعد حمدا نے اپنی کہانی شیئر کرنے کے لیے سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو پوسٹ کی جہاں اس نے جذباتی طور پر مبینہ چوری کا ذکر کیا اور اپنے گٹار کو تلاش کرنے میں مدد کی اپیل کی۔

ویڈیو نے تیزی سے توجہ حاصل کر لی، جس سے دنیا بھر سے حمایت حاصل ہو گئی۔

ویڈیو میں حمادہ نے کہا "وہ گٹار میرے والد کی ایک کڑی تھی، جن کا انتقال ہو گیا تھا۔

یہ صرف ایک موسیقی کا آلہ نہیں ہے؛ یہ میری شناخت اور میرے خاندان کی یادوں کا ایک ٹکڑا ہے”

یہ تنازعہ اس وقت شدت اختیار کر گیا جب یہ انکشاف ہوا کہ اسرائیلی فوجی جس نے ابتدا میں اپنی گٹار بجاتے ہوئے ایک ویڈیو پوسٹ کی تھی، حماد کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد اس مواد کو ڈیلیٹ کر دیا۔

سپاہی کے اقدامات نے مبینہ چوری کے اخلاقی مضمرات سے متعلق بحث کو مزید ہوا دی ہے۔

حمدا کی حالت زار نے بڑے پیمانے پر توجہ حاصل کی ہے، سوشل میڈیا صارفین اور کارکنوں نے #hisguitargotisraeled ہیش ٹیگ کے تحت اس کی کہانی شیئر کی ہے۔

TRT نے مبینہ چوری کی دستاویزی ویڈیو شیئر کی ہے۔

Latest Indian news

Popular Stories

error: Content is protected !!